طب نبوی اور امام شافعی کی دور اندیشی

طب نبوی اور امام شافعی کی دور اندیشی

طب نبوی اور امام شافعی کی دور اندیشی
طب نبوی اور امام شافعی کی دور اندیشی

طب نبوی اور امام شافعی کی دور اندیشی

تحریر:۔حکیم قاری محمد یونس شاہد میو
منتظم اعلی سعد طبیہ کالج برائے فروغ طب نبوی کاہنہ نولاہور پاکستان

اللہ تعالی نے اسلام انسانیت کے لئے بہت بڑی نعمت بنایا ہے اور اسے بحیثیت نظام خود پسند فرمایا اوراسے زندگی کا دستور العمل قرار دیا ہے۔اس میں ضروریات زندگی کے تمام پہلو جاگر کردئے ہیں اگر کہیںصراحت موجود نہیں ہے تو وہاں قوانین موجود ہیں۔
طب معاشرتہ کی ناگزیر ضرورت ہے،صحت و بیماری کی بنیاد پر دینی قوانین اور احکامات نافذ ہوتے ہیں اس لئے فقہاء و محدثین نے اس پہلو کی اہمیت کو سمجھا ہے اور اپنی کتب و نظریات میں صحت و امراض کے بارہ مین بہت سا ذخیرہ محفوظ کردیا ہے۔لیکن کاہلی وسستی اور مسائلہ ضروریہ کا بروقت ادراک سے غفلت کے ارتکاب کیا اور مسلمانوں نے زندگی کے اس اہم پہلو کو توجہ نہ دی جس کا بہت بڑا نقصان ہوا۔اس خلاء کو غیر مسلموں نے پورا کیا مسلمان باوجود بہترین قواعد و ظوابط کے مالک ہونے دست نگر بن کر رہ گئے۔

اس لیے علم طب کا اپنا مقام و مرتبہ تھا اور اس کی وضاحت امام شافعی رحمۃ اللہ علیہ نے ایک مختصر بیان میں فرمائی:
((علم صرف دو علوم ہیں: علم دین اور علم دنیا۔ وہ علم جو دین سے تعلق رکھتا ہے وہ فقہ ہے اور علم جو دنیا سے تعلق رکھتا ہے وہ طب ہے))۔
اس کی ایک اور کہانی میں۔ اس نے کہا: ((میں نہیں جانتا کہ حلال اور حرام کے بعد کیا چیز دوا سے زیادہ افضل ہے، سوائے اس کے کہ اہل کتاب نے ہمیں اس پر شکست دی ہے))۔
اور ان کے بارے میں ایک تیسری روایت میں ہے کہ وہ اس بات سے پریشان تھے کہ مسلمان طب میں کس چیز سے غفلت برتتے ہیں، اور فرماتے ہیں: (( انہوں نے ایک تہائی علم کھو دیا اور انہیں یہود و نصاریٰ کے سپرد کر دیا)) [ادب الشافعی اور ان کے فضائل رازی]۔ خدا امام شافعی پر رحم کرے کہ ان کی فصاحت و بلاغت کی زبان کتنی درست ہے اور اے خدا کے محسنو دیکھو کہ انہوں نے اہل کتاب کے بارے میں کیا کہا کہ وہ علم طب پر غالب آ گئے ہیں۔
شاید جو شخص سلیمان بن حسن الاندلسی (377) کی کتاب “طبقات الدباب و الحکیم” پڑھتا ہے، اسے شافعی کے الفاظ کی معتبریت نظر آتی ہے، اللہ تعالیٰ اس پر رحم فرمائے۔
لہٰذا دشمنانِ اسلام خواہ کسی بھی نسل، رنگ اور ملک سے تعلق رکھتے ہوں، علم طب کو حاصل کرنے کے خواہاں تھے اور وہ اعلیٰ ترین سطحوں پر پہنچ گئے تھے، اور اس میں کوئی شک و شبہ نہیں کہ ان کا سب سے بڑا مقصد علمِ طب کو حاصل کرنا ہے۔ ان کے دین کی دعوت یا مسلمان کو اس کے دین سے بے دین رہنے کے لیے نکالنے کا نتیجہ۔

اور سنیں کہ وہ کیا کہتے ہیں: “جہاں آپ کو لوگ ملتے ہیں، آپ کو درد ملتا ہے، اور جہاں درد ہوتا ہے، وہاں ڈاکٹر کی ضرورت ہوتی ہے، اور جہاں ڈاکٹر کی ضرورت ہوتی ہے، وہاں تبلیغ کا مناسب موقع ہوتا ہے۔” اس طرح مشنریوں نے دوا کو ایک پردے کے طور پر لیا جس کے نیچے وہ بیماروں سے رابطہ کرتے تھے۔
اس نے ان میں سے ایک ڈاکٹر (پال ہیریسن) کی باتیں بھی سنی، جس نے اپنی کتاب – The Doctor in the Land of Arabia – میں کہا تھا:
((مشنری ہسپتال کے قیام سے مطمئن نہیں، خواہ اس ہسپتال کے ثمرات پورے (عمان) کے خطہ تک پہنچ جائیں۔ ہم عرب ممالک میں اپنے مردوں اور عورتوں کو عیسائی بناتے پائے گئے ہیں))۔
اور وہ اپنی بات میں سچا تھا اور یہ جھوٹ ہے کیونکہ اس نے اپنے گھر کا معاملہ اپنے اندر ظاہر کیا ہے اور جس کے بارے میں وہ دفاع اور جدوجہد کرتا ہے۔
اور خدا نے سچ کہا اور کون خدا کی طرف سے بات میں زیادہ سچا ہے اور کون خدا کی طرف سے بات میں زیادہ سچا ہے: {یہود و نصاریٰ تم سے اس وقت تک راضی نہیں ہوں گے جب تک کہ تم ان کے مذہب کی پیروی نہ کرو} یہی وجہ ہے کہ ان میں سے بعض لوگوں کے ساتھ سلوک نہیں کرتے۔ بیمار ہے جب تک کہ وہ اقرار کر لے کہ اسے شفا دینے والا مسیح ہے۔
حبشہ میں، علاج اس وقت تک شروع نہیں ہوا جب تک کہ مریض نے گھٹنے ٹیک دیے اور عیسیٰ سے کہا کہ وہ اسے ٹھیک کرے۔
ایک مشن پر جانے والے ڈاکٹر کو اپنے مشورے میں، ایرا ہیرس کہتی ہیں:
(آپ کو مسلمانوں کے کانوں اور دلوں تک پہنچنے کے مواقع سے فائدہ اٹھانا چاہئے اور انہیں انجیل کی تبلیغ (شاید قائل کرنے یا مضبوط کرنے کے معنی میں) کرنا چاہئے۔ کلینکس اور اسپتالوں میں دوائی ضائع کرنے سے بچو کیونکہ یہ ان میں سب سے قیمتی ہے۔ شاید شیطان آپ کو بہکانا چاہتا ہے اور آپ سے کہتا ہے: یہ آپ کا فرض ہے کہ آپ صرف علاج کریں، خوشخبری کی تبلیغ نہ کریں۔ اس کی بات نہ سنیں)) [ڈاکٹر کی “عرب ممالک میں مذہب پرستی اور استعمار” دیکھیں۔ مصطفیٰ الخالدی، عمر فروخ۔ ]

 

Hakeem Qari Younas

Assalam-O-Alaikum, I am Hakeem Qari Muhammad Younas Shahid Meyo I am the founder of the Tibb4all website. I have created a website to promote education in Pakistan. And to help the people in their Life.
View All Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *