دماغ کسی مخصوص آواز کو شور مچانے والے ہجوم سے کیسے الگ کرتا ہے؟

دماغ کسی مخصوص آواز کو شور مچانے والے ہجوم سے کیسے الگ کرتا ہے؟

دماغ کسی مخصوص آواز کو شور مچانے والے ہجوم سے کیسے الگ کرتا ہے؟
دماغ کسی مخصوص آواز کو شور مچانے والے ہجوم سے کیسے الگ کرتا ہے؟

دماغ کسی مخصوص آواز کو شور مچانے والے ہجوم سے کیسے الگ کرتا ہے؟
تریر
حکیم قاری محمد یونس شاہد میو۔
انسانی صلاحتیں اور اعضاء و جوارح کا ٹھیک انداز میں کام کرنا،عطیہ خدا وندی ہے۔ایک جگہ ارشاد ہے :بے شک انسان سے کان ،ناک آنکھ اور دل کے بارہ میں سوال کیا جائے گا،۔۔انسانی جسم و صلاحتیوں ابھی تک نہیں سمجھا جاسکا۔یہ شارکار خدا وندی ہے۔ایک ایک خاصیت اس قدر عظیم ہے اگر سلب کرلی جائے ت اس کی واپسی کے امکانات معدوم ہوجاتے ہیں۔
۔۔۔
ہمارے دماغوں میں یہ صلاحیت ہوتی ہے کہ وہ اپنی توجہ ایک ہی اسپیکر پر مرکوز کر سکتے ہیں جس میں مقررین سے بھرے کمرے میں، جیسے خاندان کی سالگرہ کی تقریب یا ایک مصروف ریستوراں۔ اس منظر نامے کو سمجھنا، اور دماغ تقریر، زبان اور موسیقی جیسے محرکات پر کیسے عمل کرتا ہے،
یونیورسٹی آف روچیسٹر میں نیورو سائنس اور بایومیڈیکل انجینئرنگ کے پروفیسر ایڈمنڈ لالور کی تحقیق کا مرکز ہے۔
اس بارے میں نئے شواہد ملے ہیں کہ دماغ اس معلومات کو کیسے ڈی کوڈ کر سکتا ہے، جان بوجھ کر ایک بولنے والے کو سنتا ہے اور دوسرے کو نظر انداز کر دیتا ہے۔
دماغ کسی مخصوص اسپیکر سے آنے والے الفاظ کو سمجھنے کے لیے اضافی اقدامات کرتا ہے، اور یہ قدم دوسرے ارد گرد کے الفاظ کے ساتھ نہیں اٹھاتا ہے۔
محقق لالور کہتے ہیں، “نتائج بتاتے ہیں کہ جس کہانی پر ہم نے توجہ مرکوز کی تھی اور جس کہانی کو ہم نے نظر انداز کیا تھا، دونوں کی صوتیات ایک ہی طریقے سے پروسیس کی جاتی ہیں – لیکن دماغ میں آگے کیا ہوتا ہے اس کی سطح پر واضح فرق ہے۔
۔”مطالعہ کے شرکاء نے بیک وقت دو کہانیاں سنیں، اور ان سے کہا گیا کہ وہ ان میں سے صرف ایک پر اپنی توجہ مرکوز کریں۔ الیکٹرو اینسفالوگرافی کا استعمال کرتے ہوئے، محققین نے پایا کہ کہانی کے شرکاء کو جس پر توجہ مرکوز کرنے کے لیے کہا گیا تھا، وہ فونیمز میں تبدیل ہو گئے تھے، جو فونیمز ہیں جو ایک لفظ کو دوسرے لفظ سے ممتاز کرتے ہیں، جبکہ دوسری کہانی نے ایسا نہیں کیا۔”یہ تبدیلی اس کہانی کو سمجھنے کی طرف پہلا قدم ہے جس پر ہم توجہ مرکوز کر رہے ہیں،” لالور کہتے ہیں۔ آوازوں کی شناخت زبان کے مخصوص زمروں سے مماثل ہونے کے طور پر کی جانی چاہیے، جیسے کہ صوتیات اور حرف، تاکہ ہم آخر میں بولے جانے والے الفاظ کی شناخت کر سکیں، چاہے وہ مختلف آوازیں کیوں نہ ہوں۔
مثال کے طور پر، مختلف بولیوں یا پچوں والے لوگوں کے ذریعے بولے گئے الفاظ۔یہ مطالعہ لالور کی سربراہی میں 2015 کے مطالعے کا تسلسل ہے، جو جرنل Cerebral Cortex میں شائع ہوا ہے۔ اس تحقیق کو 2021 میں نیورو انجینیئرنگ کے لیے میشا مہولڈ پرائز ملا، ان ٹیکنالوجیز پر اس کے اثرات کے لیے جس کا مقصد معذور افراد کو دنیا کے ساتھ حسی اور موٹر تعامل کو بہتر بنانے میں مدد کرنا ہے، جیسے پہننے کے قابل آلات، جیسے کہ سماعت کے آلات تیار کرنا۔تحقیق 2012 میں Telluride میں ایک علمی نیورو انجینیئرنگ ورکشاپ سے شروع ہوئی، اور ایک کثیر پارٹنر ادارے کی تخلیق کا باعث بنی جس نے EU کی مالی اعانت سے چلنے والے سنجشتھاناتمک-ایڈجسٹڈ ہیئرنگ ایڈ پروجیکٹ کو اپنایا جس نے حقیقی وقت میں سمعی توجہ کو ڈیکوڈنگ سسٹم کامیابی سے تیار کیا۔
لالور کہتے ہیں، ’’یہ اعزاز حاصل کرنا دو حوالوں سے ایک بڑا اعزاز ہے۔ سب سے پہلے، یہ اعزاز کی بات ہے کہ آپ کے ساتھیوں کی طرف سے آپ کے قیمتی اور بااثر کام کے لیے پہچانا جانا، کیونکہ یہ کمیونٹی نیورو سائنسدانوں اور انجینئروں پر مشتمل ہے۔
دوسری بات یہ کہ میرا نام نیورو انجینیئرنگ کے شعبے کی علمبردار میشا مہولڈ کے ساتھ جوڑا جانا ایک بڑے اعزاز کی بات ہے، جن کا بہت چھوٹی عمر میں انتقال ہو گیا تھا۔جان فاکس، ڈیل مونٹی نیورو سائنس انسٹی ٹیوٹ کے ڈائریکٹر، اس تحقیق کے شریک مصنف تھے، جس نے یہ ظاہر کیا کہ دماغی لہر کے سگنل اس بات کا تعین کرنے کے لیے استعمال کیے جاسکتے ہیں کہ ایک سننے والا ملٹی اسپیکر والے ماحول میں کس کی طرف توجہ دے رہا ہے۔ یہ مطالعہ اس لحاظ سے منفرد تھا کہ یہ میڈین دماغی سگنلز پر اثرات کو دیکھنے کے لیے معیاری نقطہ نظر سے آگے نکل گیا۔ لالور کہتے ہیں، “ہماری تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ ہم تقریباً حقیقی وقت میں، دماغی سگنلز کو ڈی کوڈ کر سکتے ہیں تاکہ ہمیں بخوبی معلوم ہو کہ آپ اپنی توجہ کس کی طرف مبذول کر رہے ہیں۔”

Hakeem Qari Younas

Assalam-O-Alaikum, I am Hakeem Qari Muhammad Younas Shahid Meyo I am the founder of the Tibb4all website. I have created a website to promote education in Pakistan. And to help the people in their Life.
View All Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *