بیضہ مرغ۔انڈہ۔Egg

بیضہ مرغ۔انڈہ۔Egg

بیضہ مرغ۔انڈہ۔Egg
بیضہ مرغ۔انڈہ۔Egg

18 بیضہ مرغ۔انڈہ۔

تحریر :
حکیم قاری محمد یونس شاہد میو
منتظم اعلی سعد طبیہ کالج برائے فروغ طب نبوی کاہنہ نولاہور پاکستان

غدی عضلاتی۔ نبیوں میں سے کسی نے نبی نےاپنی کسی غیر معمولی کمزوری کی کی شکایت کی تو اللہ تعالیٰ نے انہیں انڈے کھانے کو حکم دیا۔ البيهقي في شعب الإيمان.الطب النبوي للذهبي (ص: 121)الآثار المروية في الأطعمة السرية لابن بشكوال (ص: 142) عَنْ نَافِعٍ عَنِ ابْنِ عُمَرَ أَنَّ رَجُلا شَكَى إِلَى سرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قِلَّةَ النَّسْلِ فَأَمَرَهُ بِأَكْلِ الْبَيْضِ۔سروى أبو نعيم عن جابر رضي الله عنهما قال: لمّا أراد رسول الله صلى الله عليه وسلم غزو ذات الرّقاع جاء له علبة زيد بثلاث بيضات أداحي، فقال: يا رسول الله، وجدت هذه البيضات في مفحص نعام، فقال: «دونك يا جابر، فاعمل هذه البيضات.فعملتهن ثمّ جئت بهنّ في قصعة، فجعلت أطلب خبزا فلا أجده، فجعل رسول الله صلى الله عليه وسلم وأصحابه يأكلون من ذلك البيض بغير خبز حتى انتهى إلى حاجته، والبيض في القصعة كما هو ثمّ قام فأكل منه عامّة أصحابه ثم رحلنا مبردين قال ابن سعد: وكانوا أربعمائة ويقال: سبعمائة .بل الهدى والرشاد في سيرة خير العباد (9/ 476)
۔۔۔۔۔
ناشتے میں انڈے کھانے کے حیرت انگیز فوائد
انڈے قدیم زمانے سے غذا کا بنیادی حصہ رہے ہیں اور ہمارے کھانوں میں ان کی مسلسل موجودگی کی ایک وجہ یہ ہے کہ یہ ہمیں صحت سے متعلق کئی فوائد فراہم کرتے ہیں، اُبلے ہوئے انڈے اور آملیٹ پروٹین، کیلشیم، کئی وٹامنز اور غذائی اجزاء کا ذریعہ بھی ہیں۔ماہرین کہتے ہیں کہ انڈے پروٹین کا ایک اچھا ذریعہ ہیں، انڈوں میں دل کی صحت مند غیر محفوظ شدہ چربی بھی ہوتی ہے اور یہ اہم غذائی اجزاء، جیسے وٹامن بی 6، بی 12 اور وٹامن ڈی کا ایک بہت بڑا ذریعہ ہیں، ناشتے میں انڈوں کو اپنی خوراک میں شامل کرنے کے کچھ فوائد یہ ہیں۔انڈے کھانے سے ہائی ڈینسٹی لیپوپروٹین (ایچ ڈی ایل) کی سطح بلند ہوتی ہے جسے ’اچھا‘ کولیسٹرول بھی کہا جاتا ہے۔ جو لوگ ایچ ڈی ایل کی سطح زیادہ رکھتے ہیں ان میں دل کی بیماری، فالج اور دیگر صحت کے مسائل کا خطرہ کم ہوتا ہے۔
بینائی کے لئے۔
ایک تحقیق کے مطابق، چھ ہفتوں تک ایک دن میں دو انڈے کھانے سے ایچ ڈی ایل کی سطح میں 10 فیصد اضافہ ہوتا ہے۔جیسے جیسے ہماری عُمر بڑھتی جاتی ہے تو ہمیں اپنی آنکھوں کا بہتر خیال رکھنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ انڈے کی زردی میں لوٹین اور زیکسینتھین کی بڑی مقدار ہوتی ہے، جو مددگار اینٹی آکسیڈینٹس ہیں جو آنکھوں میں موتیا کے خطرے کو کم کرنے میں مدد کرتے ہیں۔ انڈوں میں وٹامن اے بھی زیادہ ہوتا ہے جو آنکھوں کی صحت کے لیے فائدہ مند ہے۔
بینائی کے لیے سود مند
انڈے ان لوگوں کے لیے اومیگا تھری فیٹی ایسڈز حاصل کرنے کا ذریعہ ہیں جو مچھلی نہیں کھاتے۔ اومیگا تھری دماغ اور بینائی کے لیے مفید ہے۔
انڈوں کی زردی میں لیوٹین اور زیسانتھین نام کے اینٹی آکسیڈینٹس ہوتے ہیں جو آنکھوں کی حفاظت کرتے ہیں۔
کولین۔
انڈوں میں پایا جانے والا ایک ضروری غذائی جزو ہے جو دماغ کی نشوونما اور افعال کو متحرک کرتا ہے۔ یہ یادداشت برقرار رکھتا اور ہماری دماغی صحت بہتر کرتا ہے۔انڈا ایک طاقتور غذا ہے جو پروٹین اور چربی دونوں کا شاندار مجموعہ ہے۔ جب روزانہ استعمال کیا جاتا ہے تو، یہ نہ صرف آپ کو طویل عرصے تک بھرا رکھتا ہے بلکہ یہ آپ کے وزن میں کمی کے سفر میں بھی مددگار ثابت ہوسکتا ہے۔
انڈے کی زردی کولین کے وافر ذرائع میں سے ایک ہے، کیونکہ اس کے 100 گرام میں 680 ملی گرام کولین ہوتا ہے۔ جو کہ میٹابولک عمل میں شامل ہوتا ہے۔ انسانی جسم میں، بشمول سیل کی ساخت، اور نیورو ٹرانسمیٹر کی ترکیب، یہ بات قابل غور ہے کہ کولین کی کمی جگر کی بیماریوں، ایتھروسکلروسیس اور اعصابی عوارض کو متاثر کرتی ہے۔ کیروٹینائڈز، جیسے: lutein Lutein اور zeaxanthin، جو زردی کو پیلا یا نارنجی رنگ دیتے ہیں، کو xanthophylls بھی کہا جاتا ہے، جو آنکھوں کی صحت اور انسانی بصارت کے لیے ضروری پروٹین ہیں۔ 2010 میں جرنل آف ایگریکلچرل اینڈ فوڈ کیمسٹری میں شائع ہونے والی ایک تحقیق، جو جانوروں پر کی گئی تھی، اس بات کی نشاندہی کرتی ہے کہ انڈے کی زردی کے پیپٹائڈس خون کے سرخ خلیوں میں اینٹی آکسیڈینٹ انزائمز کے ارتکاز کو بڑھا کر آکسیڈیٹیو تناؤ کو کم کرتے ہیں۔
قوت مدافعت میں بہتری۔
انڈے پروٹین، وٹامن ڈی، وٹامن بی 2، بی 5، بی 12، وٹامن ای، فولیٹ، لیوٹین اور اومیگا تھری سے بھرپور ہوتے ہیں۔ یہ تمام چیزیں قوت مدافعت کو بڑھاتی ہیں جبکہ وائرس اور بیکٹیریا کے پھیلاؤ کو کم کرتی ہیں۔
انڈے خاص طور پر سیلینیم سے بھرپور ہوتے ہیں جس سے قوت مدافعت بڑھتی ہے، ڈی این اے کو کم نقصان ہوتا ہے اور کینسر کے خلیے تباہ ہوتے ہیں۔
کیا انڈے کی زردی کھانی چاہئے؟
لوگ سمجھتے ہیں کہ انڈوں کی زردی کے نتیجے میں بلڈ کولیسٹرول کی سطح بڑھتی ہے جو کہ خون کی شریانوں کو تنگ کرکے امراض قلب کا باعث بنتی ہے۔ انڈوں میں غذائی کولیسٹرول زردی میں پائی جاتی ہے مگر طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ لوگوں کو اس سے خوفزدہ ہونے کی ضرورت نہیں۔ ایک تحقیق کے مطابق انڈوں میں پائے جانے والی غذائی کولیسٹرول بلڈ کولیسٹرول بڑھانے کا باعث نہیں بنتی بلکہ وہ صحت کے لیے نقصان دہ کولیسٹرول کی سطح میں کمی لاتی ہے۔ درحقیقت انڈوں کی زردی مختلف قسم کی چربی کا مجموعہ ہوتی ہے جبکہ وٹامن ای بھی اس کا حصہ ہے جو جسم کے لیے کافی ضروری ہے۔ تاہم اس کا سب سے خاص جز کیروٹین ہے جس کے ساتھ لیوٹین اور زیاژنتین بھی ہوتے ہیں جو آنکھوں کی صحت میں مددگار اور ورم سے تحفظ دیتے ہیں۔
کیا انڈے کی سفیدی کھانی چاہئے؟
انڈے پروٹین سے بھرپور غذا ہے خصوصاً زردی، مگر سفیدی میں بھی کم چربی والی پروٹین کی مقدار کافی زیادہ ہوتی ہے جو کہ جسم کے لیے فائدہ مند ہے۔ یہ پروٹین مسلز بنانے کے ساتھ ساتھ بے وقت کھانے کی اشتہا کی روک تھام کرکے پیٹ کو زیادہ دیر تک بھرے رکھتا ہے۔ انڈے ویسے بھی زیادہ کیلیوریز والی غذا نہیں، مگر زردی کو نکال دیا جائے تو یہ کیلوریز اور کم ہوجاتی ہیں۔ تو اگر جسمانی وزن میں کمی کے خواہشمند ہیں تو پورے انڈے کی بجائے سفیدی کا انتخاب جادوئی اثرات مرتب کرسکتا ہے۔ انڈے کی سفیدی میں موجود پوٹاشیم ہائی بلڈ پریشر کو کم کرنے اور اسے صحت مند سطح پر رکھنے میں مدد دیتا ہے۔ اسی طرح سفیدی اہم وٹامنز جیسے اے، بی 12 اور ڈی سے بھرپور ہوتی ہے، ان میں سب سے اہم وٹامن بی 2 ہے جو کہ عمر بڑھنے سے مسلز میں آنے والی تنزلی، موتیا اور آدھے سر کے درد سمیت دیگر عوارض کا خطرہ کم کرتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مناسب تغذیہ
کیا روزانہ انڈے کھانا نقصان دہ ہے؟
انڈے انسانی صحت کے لیے اپنے بے شمار فوائد کے لیے جانے جاتے ہیں لیکن بہت سے لوگ روزانہ انڈے کھانے کا مشورہ نہیں دیتے، کیا ہر روز انڈے کھانا واقعی نقصان دہ ہے؟
انڈوں میں کولیسٹرول کی مقدار زیادہ ہوتی ہے، تو کیا روزانہ انڈے کھانا نقصان دہ ہے؟ماضی میں یہ بات مانی جاتی تھی کہ انسان کو ہفتے میں ایک یا دو انڈے سے زیادہ نہیں کھانا چاہیے، زردی میں کولیسٹرول کی زیادہ مقدار ہوتی ہے، جو کہ 200 ملی گرام فی انڈے کے برابر ہوتی ہے، جہاں پرانی سفارشات یہ تھیں کہ روزانہ 300 ملی گرام سے زیادہ کولیسٹرول استعمال نہ کریں۔
حالیہ مطالعات سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ کھانے کے ذریعے جسم میں داخل ہونے والاکولیسٹرول خون کی نالیوں میں موجود نقصان دہ کولیسٹرول (LDL) کی مقدار پر کوئی خاص اثر نہیں ڈالتا، بلکہ انسانوں کی طرف سے کھائی جانے والی سیچوریٹڈ چکنائی سے بہت زیادہ متاثر ہوتا ہے،
کولیسٹرول کی سطح.
انسانی جسم میں کولیسٹرول بنیادی طور پر جگر میں ترکیب کیا جاتا ہے، تاکہ سیر شدہ چکنائی جگر کو کولیسٹرول کے اخراج کے لیے تحریک دیتی ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ کولیسٹرول کے انسانی استعمال پر ایک جیسا اثر نہیں پڑتا۔اس لیے حالیہ مطالعات کے مطابق روزانہ انڈے کھانا، یعنی ایک ہفتے میں سات انڈے بالکل بھی نقصان دہ نہیں، اس کے برعکس انڈے کھانے کی ان اقسام میں سے ایک ہے جو اہم عناصر سے بھرپور ہونے کے ساتھ ساتھ کیلوریز میں بھی کم اور سنترپت چربی.
روزانہ انڈے کھانے کے فوائدروزانہ انڈے کھانے کے اہم فوائد یہ ہیں۔
مدافعتی نظام کی بہتری
:1. بہت سے غذائی اجزاءانڈوں میں بہت سے وٹامنز اور منرلز ہوتے ہیں جو انسانی صحت اور مدافعتی نظام کے لیے اہم ہیں۔انڈوں میں وٹامن اے اور وٹامن بی 12 ہوتا ہے جو کہ انسانوں میں قوت مدافعت بڑھانے کے لیے اہم ہیں۔انڈے کی زردی وٹامن ڈی اور زنک کا بھی بھرپور ذریعہ ہے۔انڈوں میں ایسے معدنیات پائے جاتے ہیں جو مردوں اور عورتوں دونوں کے مدافعتی نظام اور زرخیزی کو برقرار رکھنے کے لیے اہم اور ذمہ دار ہیں۔
۔2. دماغی صحت انڈوں میں موجود وٹامنز دماغی صحت کو بہتر بنانے میں بہت مدد کرتے ہیں۔انڈوں میں وٹامن بی 6، وٹامن بی 12، فولیٹ اور کولین پائے جاتے ہیں، کیونکہ یہ انسانی دماغ کی صحت کو برقرار رکھنے میں اہم عناصر ہیں۔
۔3. سوزش کو کم کریں۔روزانہ انڈے کھانے سے انسانی انفیکشن اور اس سے منسلک بیماریوں کو نمایاں طور پر کم کرنے میں مدد ملتی ہے۔
۔4. جلد کی صحت انڈے کی سفیدی پر مشتمل ماسک کا استعمال اچھا نہیں ہے، کیونکہ تازہ اور بغیر پکے ہوئے انڈوں میں سلمونیلا ہو سکتا ہے، جو جلد کو نقصان پہنچا سکتا ہے۔اس لیے انڈے کھانا انسانوں اور جلد کے لیے زیادہ فائدہ مند ہے اور عمر بڑھنے کی علامات کے علاج میں بھی مدد کرتا ہے۔
۔5. ترپتیانڈے کھانے، خاص طور پر صبح کے وقت، ایک شخص کو طویل عرصے تک پیٹ بھرنے کا احساس دلانے میں مدد ملتی ہے، کیونکہ انڈوں میں موجود پروٹینز ہیں۔
۔6. توانائی صبح سویرے انڈے کھانے سے انسان کو دن بھر کے کام کرنے کے لیے توانائی ملتی ہے، کیونکہ انسانی جسم انڈوں کو جذب کرتا ہے تاکہ یہ انسانی جسم کو آہستہ آہستہ اور طویل عرصے تک توانائی فراہم کرتا ہے۔
۔7. آسانی سے وزن کم کریں۔انڈوں میں پروٹین اور صحت مند چکنائی ہوتی ہے جو آپ کو طویل عرصے تک پیٹ بھرنے اور دن بھر استعمال ہونے والی کیلوریز کو کم کرنے میں مدد دیتی ہے۔وزن میں کمی کے لیے انڈوں کی افادیت کا انحصار زیادہ تر تیاری کے طریقہ کار پر ہوتا ہے، اس لیے انڈوں میں بہت زیادہ چکنائی اور پنیر ڈالنے سے گریز کرنے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔کیا کچے انڈے کھانے کی سفارش کی جاتی ہے؟چھوٹے بچوں، حاملہ خواتین اور بوڑھے افراد کو کچے انڈے یا ایسی غذائیں کھائیں جن میں کچے انڈے ہوتے ہیں، کیونکہ انہیں انڈوں کو اس وقت تک پکانا چاہیے جب تک کہ سفید اور زردی مکمل طور پر جم نہ جائے۔کچے انڈے بعض بیماریوں اور بعض صورتوں میں فوڈ پوائزننگ کا باعث بنتے ہیں، اور امیونو ڈ یفیسنسی کے امراض میں مبتلا افراد کو محتاط رہنا چاہیے کہ کچے انڈے بالکل نہ کھائیں۔
ابلے ہوئے انڈے کے فوائد
انڈے کی پروٹین میں غذائی اجزاء:
انڈے اعلیٰ قسم کے پروٹین کا ایک اچھا ذریعہ ہیں، کیونکہ ان میں ضروری فیٹی ایسڈز ہوتے ہیں جو انسانی جسم کی ضرورت کو پورا کرتے ہیں، خاص طور پر لائسین کی بڑی مقدار اور سلفر پر مشتمل امینو ایسڈز کی موجودگی۔
فیٹی ایسڈ:
فیٹی ایسڈز انڈوں میں بنتے ہیں بنیادی طور پر درمیانے سے لمبی زنجیروں پر مشتمل ہوتے ہیں، اور ان میں سیر شدہ فیٹی ایسڈز شامل ہوتے ہیں، جو 30 فیصد بنتے ہیں، اور غیر سیر شدہ فیٹی ایسڈ، جو انڈوں میں موجود کل فیٹی ایسڈز کا 70 فیصد بنتے ہیں۔ اور سنترپت فیٹی ایسڈز بنیادی طور پر 23% palmitic acid یا palmitic acid پر مشتمل ہوتے ہیں، Stearic acid 4%، myristic acid 1%، جبکہ monounsaturated fatty acids oleic acid 47%، اور polyunsaturated fatty acids linoleic سے بنتے ہیں۔ تیزاب میں 16%، اور لینولینک ایسڈ میں 2%،
یہ بات قابل غور ہے کہ فیٹی ایسڈ جسم کے ضروری اجزاء میں سے ایک ہیں، جو جسم کے نارمل جسمانی افعال کو برقرار رکھنے میں مدد دیتے ہیں، اور حفاظتی عمل میں بھی حصہ ڈالتے ہیں۔
پیتھولوجیکل محرکات کا ردعمل۔
۔ دن: انڈے سیلینیم کا ایک بھرپور ذریعہ ہیں، [4] جو انسانی جسم کو خاص پروٹین تیار کرنے میں مدد کرتا ہے جسے اینٹی آکسیڈنٹ انزائمز کہا جاتا ہے، جو خلیوں کو پہنچنے والے نقصان کو کم کرتے ہیں۔ کچھ قسم کے کینسر ہونے کے خطرے کو کم کرتا ہے۔ بھاری دھاتوں کے زہریلے اثرات اور کچھ دوسرے نقصان دہ مادوں سے انفیکشن۔
فاسفورس چکنائیوں کی ترکیب۔
جو کہ خلیے کی جھلیوں کے اہم ساختی اجزاء ہیں، اس کے علاوہ یہ کیلشیم فاسفیٹ نمکیات کی ساخت میں شامل ہے، جو ہڈیوں کے اہم اجزاء میں سے ایک ہیں۔ وٹامن ڈی: وٹامن ڈی کی ضرورت ہوتی ہے۔ جسم اپنے افعال کو بخوبی انجام دیتا ہے، اور یہ ہڈیوں کو مضبوط بنانے میں بھی مدد کرتا ہے،
اور یہ واحد غذائیت ہے جو جسم کی نمائش کے بعد پیدا ہوتا ہے۔ اور یہ بات قابل غور ہے کہ انڈے کی زردی میں وٹامن ڈی کے 37 بین الاقوامی یونٹ ہوتے ہیں، جو اس وٹامن کی روزانہ تجویز کردہ مقدار کے 5 فیصد کے برابر ہے۔ چکن کے انڈے جو باہر پالے جاتے ہیں، یا جن کو وٹامن ڈی سے بھرپور غذائیں کھلائی جاتی ہیں، ان میں اس وٹامن کی زیادہ مقدار ہوتی ہے۔ جسم کی توانائی کی فراہمی کو برقرار رکھنے کے علاوہ پروٹین، چکنائی اور کاربوہائیڈریٹس کو توڑنے میں بھی مدد کرتا ہے۔ کوبالامین کہا جاتا ہے، جو کہ اعصابی بافتوں کی صحت، دماغی افعال اور خون کے سرخ خلیات کی پیداوار کے لیے ضروری ہے۔ جسم، جیسے: خلیات کی صحت مند تقسیم میں معاونت کرنا، جنین کی مناسب نشوونما کو فروغ دینا، پیدائشی نقائص کے خطرے کو کم کرنے کے علاوہ، اور ایک بڑے انڈے میں 22 مائیکرو گرام فولیٹ ہوتا ہے، یا اس کی مقدار کا تقریباً 6%۔ اس وٹامن کا تجویز کردہ یومیہ الاؤنس ۔
وٹامن اے: وٹامن اے دانتوں، انسانی ڈھانچہ کی، نرم بافتوں، چپچپا جھلیوں اور جلد کی تشکیل اور دیکھ بھال میں مدد کرتا ہے، اور اس وٹامن کو ریٹینول کے نام سے جانا جاتا ہے کیونکہ یہ ریٹینا میں روغن پیدا کرتا ہے۔ انڈوں میں وٹامن اے کی حیاتیاتی دستیابی کا تخمینہ 90% سے 100% تک لگایا گیا ہے۔
زرعی جرنل میں شائع ہونے والی ایک تحقیق۔ اور فوڈ نے 2009 میں کیمسٹری کی طرف اشارہ کیا، جو کہ جانوروں پر کیا گیا تھا، اس سے پتہ چلتا ہے کہ چکن کے انڈوں میں پایا جانے والا لائزوزائم انزائم ریگولیٹری ٹی سیلز کو فعال کرکے آنتوں کے توازن کو بحال کرنے میں مدد کرتا ہے، جو کہ بلغم کے مدافعتی نظام کو منظم کرنے کے لیے اہم ہیں۔ یہ سائٹوکائن کو کم کرتا ہے جو سوزش پیدا کرتا ہے۔ یہ اثر انجیوٹینسن کو تبدیل کرنے والے انزائم کی سرگرمی کو روک کر ہو سکتا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انڈے انسانی جلد، بالوں یا ہڈیوں کے لیے ضروری غذا سمجھے جاتے ہیں، کیونکہ ان میں پروٹین اور کیلشیم کی بڑی مقدار ہوتی ہے، خاص طور پر کیراٹین، جو بالوں کی پرورش اور اس کی چمک میں مفید ہے۔ اس لیے روزانہ ایک سے دو گولیاں مسلسل کھانے کی سفارش کی جاتی ہے، چاہے وہ کسی بھی شخص کی عمر کا ہو، اور انڈے کی زردی بالوں کی نشوونما اور صحت میں سب سے زیادہ موثر اور اثر انگیز حصہ ہے،
اور اس مضمون میں ہم اس کے فوائد کے بارے میں جانیں گے۔ بالوں کے لیے انڈوں کا، کچھ اہم ترین ترکیبوں اور مرکبات کا ذکر کرتے ہوئے جن میں انڈے اہم جز ہیں۔ بالوں کے لیے انڈے کھانے کے فائدے صحت مند اور نرم بال حاصل کریں۔ کمزور بالوں کو مضبوط کریں، اور خراب بالوں کو درست کریں۔ اس کے نقصان کو روکنا؛ کیونکہ یہ ضروری پروٹین کے ساتھ کھوپڑی کی پرورش کرتا ہے۔ بالوں کو ٹوٹنے سے روکتا ہے۔ اس کی لمبائی اور کثافت میں اضافہ۔ انڈے کی زردی بالوں کا قدرتی کنڈیشنر ہے۔ بالوں کے لیے انڈے کی ترکیبیں انڈے کی زردی اور شہد کی ترکیبیں اجزاء انڈے کی زردی۔ مایونیز ایک کھانے کا چمچ۔
قدرتی شہد ایک کھانے کا چمچ۔ زیتون کا تیل دو کھانے کے چمچ۔ استعمال کرنے کا طریقہ: پچھلے اجزاء کو ایک چھوٹے پیالے میں ملا کر بالوں اور کھوپڑی پر لگائیں اور دو گھنٹے پہلے اسے نیم گرم پانی اور شیمپو سے دھو لیں، کیونکہ یہ نسخہ بالوں کو مضبوط بناتا ہے اور ان کی جڑوں سے پرورش پاتاہے۔
انڈے اور زیتون کے تیل کی ترکیب اجزاء 2 درمیانے انڈے۔ زیتون کا تیل دو کھانے کے چمچ۔ استعمال کرنے کا طریقہ: اجزاء کو آپس میں مکس کر کے بالوں بالخصوص کھوپڑی پر لگائیں، پلاسٹک کی ٹوپی سے ڈھانپیں اور کم از کم ایک گھنٹے کے لیے چھوڑ دیں، پھر بالوں کو پانی اور مناسب شیمپو سے دھو لیں، جیسا کہ یہ نسخہ کام کرتا ہے۔
بالوں کو نرم کرنے کے لیے، خاص طور پر خشک بالوں کو۔ انڈے اور واٹر کریس کا تیل بنانے کی ترکیب
اجزاء دو کھانے کے چمچ واٹر کریس آئل۔
دو درمیانے انڈے۔ استعمال کرنے کا طریقہ ہم پچھلے اجزاء کو اچھی طرح مکس کرتے ہیں، پوری کھوپڑی کی مالش کرتے ہیں، بالوں کو تولیہ سے ڈھانپ کر کم از کم آدھے گھنٹے کے لیے چھوڑ دیتے ہیں، کیونکہ یہ بالوں کے جھڑنے کو کم کرتا ہے اور ٹوٹنے کو روکتا ہے۔
انڈے اور لیموں کی ترکیب اجزاء ایک انڈا۔ ایک کپ لیموں کا رس۔ استعمال کرنے کا طریقہ: اجزاء کو آپس میں ملا کر بالوں پر لگائیں، سر کی جلد پر اچھی طرح مساج کریں، اور نیم گرم پانی سے دھونے سے پہلے آدھے گھنٹے کے لیے چھوڑ دیں، اور دوبارہ مناسب شیمپو اور پانی سے۔ انڈے کی زردی اور زیتون کے تیل کی ترکیب اجزاء بڑے انڈے کی زردی۔ زیتون کا تیل دو کھانے کے چمچ۔ استعمال کرنے کا طریقہ اجزاء کو اچھی طرح مکس کریں، بالوں میں رکھیں،
پلاسٹک کی ٹوپی یا تولیے سے تقریباً آدھے گھنٹے کے لیے ڈھانپیں، پھر اسے نیم گرم پانی اور شیمپو سے دھو لیں، اور نرم اور گھنے بالوں کے لیے ہفتے میں ایک بار یہ نسخہ دہرائیں۔ .
انڈے اور کوکونٹ آئل کی ترکیب اجزاء 1کھانے کا چمچ ناریل کا تیل۔ قدرتی شہد ایک کھانے کا چمچ۔ ایک انڈا. بنانے کا طریقہ پچھلے اجزاء کو آپس میں مکس کریں، پھر بالوں میں لگائیں، سر کی جلد کی اچھی طرح مساج کریں، اور نیم گرم پانی اور مناسب شیمپو سے دھونے سے پہلے کم از کم ایک گھنٹے کے لیے چھوڑ دیں۔
انڈوں کا تیل بالوں کے لئے بہت اہم ہے۔اس کے نکالنے کا خاص طریقہ ہے۔جلد اس کا ذکر کرونگا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.