* بھینس کے گوشت کے طبی فوائد طب نبوی کی روشنی میں*

* بھینس کے گوشت کے طبی فوائد طب نبوی کی روشنی میں*

* بھینس کے گوشت کے طبی فوائد طب نبوی کی روشنی میں*
* بھینس کے گوشت کے طبی فوائد طب نبوی کی روشنی میں*

35* بھینس کے گوشت کے طبی فوائد طب نبوی کی روشنی میں*

آپ صلی الله علیه وسلم نے فرمایا ’’دنیا والوں اور جنتیوں کے کھانے کا سردار گوشت ہے۔‘‘
سعد طبیہ کالج برائے فروغ طب نبویﷺ کے ماہرین کے زیر نگرانی قران و احادیث میں مذکورہ غذائیوں اور عقاقیر پر تحقیقی سلسلہ35

اثر خامہ:حکیم قاری محمد یونس شاہد میو
منتظم اعلی سعد طبیہ کالج برائے فروغ طب نبوی کاہنہ نولاہور پاکستان

حضرت ابو الدرداؓ کی حدیث سے مروی ہے۔ آپ صلی الله علیه وسلم نے فرمایا ’’دنیا والوں اور جنتیوں کے کھانے کا سردار گوشت ہے۔‘‘
امام زہری نے بیان کیا ہے کہ گوشت خوری سے 70قوتوں میں اضافہ ہوتا ہے۔ محمد بن واسع کا خیال ہے کہ گوشت خوری سے بصارت تیز ہوتی ہے۔ چناںچہ حضرت علیؓ سے مروی ہے، آپ صلی الله علیه وسلم نے فرمایا کہ گوشت کھاؤ، اس لیے کہ یہ بدن کے رنگ کو نکھارتا ہے۔ پیٹ بڑھنے نہیں دیتا۔ اخلاق و عادات بہتر بناتا ہے۔ نافع کا بیان ہے کہ حضرت عبداللہ بن عمرؓ ماہ رمضان میں اکثر گوشت کھاتے تھے۔ حضرت علیؓ سے منقول ہے کہ جس نے چالیس رات گوشت کھانا چھوڑ دیا، اس کا اخلاق برا ہو جائے گا۔

۔الجامع الصحيح للسنن والمسانيد (31/ 273)الجامع الصحيح للسنن والمسانيد (32/ 154)
قال رسول اللّه (ص ) : الجاموس يجزي عن سبع ـ يعني في الاضحية .سنن النبى الاكرم (ص ) – (ج 97 / ص 10)تهذيب الاحكام – (ج 178 / ص 9)الاستبصار فيما اختلف من الاخبار – (ج 185 / ص 1)
قال : سألت أبا الحسن ( عليه السلام ) عن لحوم الجواميس وألبانها ، فقال : لا بأس بها .وسائل الشيعة – (ج 247 / ص 7)بھینس کی مدت حمل۔281 – 334 days ہوتاہے۔
۔۔۔
انسانی زندگی کے لئے گوشت کی اہمیت و طبی فوائد

گوشت ہماری زندگی کی اہم ضرورت ہے۔ گوشت نائٹروجن‘ چربی‘ نمکیات اور پانی کا مجموعہ ہوتا ہے‘ ہمارے جسم کے رگ و ریشے زیادہ تر نائٹروجنی مرکبات سے بنے ہوئے ہوتے ہیں۔ ہمارا جسم مشقت‘ ورزش اور مختلف حرکات سے جب تحلیل ہونا شروع ہوجاتا ہے اور اس کمی کو صرف نائٹروجنی غذا سے پورا کیا جاسکتا ہے۔ نائٹروجنی غذا ہی سے ہمارے جسم کی نشوونما ہوتی ہے۔ ماہرین غذا کا کہنا ہے کہ پروٹین نباتاتی غذاؤں کی نسبت گوشت میں بہت زیادہ ہوتی ہے۔ مسلمانوں کو صرف حلال جانور کھانے کا حکم دیا گیا ہے۔ موجودہ ماڈرن دور کی تحقیق نے ثابت کردیا ہے کہ اللہ رب العزت نے جن جانوروں کو حرام قرار دیا ہے وہ واقعی انسانی صحت کیلئے مضر ہیں۔
گوشت کی ایک خاصیت یہ بھی ہے کہ روزانہ کھانے والے کی طبیعت میں غصہ زیادہ پایا جاتا ہے‘ نفسانیت بڑھ جاتی ہے‘ یہ لوگ زود رنج اور خودغرض بھی دیکھنے میں آئے ہیں۔ ہر انسان جو چاہے کھاسکتا ہے لیکن یہ بات ضرور ذہن میں رکھنی چاہیے کہ جو گوشت وہ کھانا چاہتے ہیں اس کی افادیت اور مضمرات کیا ہیں؟ طبی ماہرین کے مطابق ہر انسان کو جو مشقت نہ کرسکتا ہو کیلئے روزانہ کا آدھ پاؤ فائدہ مند ہے۔ اس سے زائد نقصان کا باعث ہے۔ گوشت کو بھوننے کے بعد یا اس کے کباب بنا کر پکا کر ڈھکنا نہیں چاہیے‘ اس طرح ڈھکنے سے زہریلا اور بدمزہ ہوجاتا ہے۔
گوشت کے فوائد و خواص MEAT
ماہرین تغذیہ نے گوشت کو بطور غذا و دوا مفید قرار دیا ہے۔ اس کی تاثیر گرم تر ہے۔ یہ جسم انسانی میں خون اور گوشت بڑھاتا ہے۔ بادی دور کرتا اور طاقت بخشتا ہے۔ بدن کو موٹا اور جسم میں چربی پیدا کرتا ہے۔ البتہ اس کا کثرت سے استعمال دماغ کو کند کر دیتا ہے۔
جدید تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ گوشت کے اجزائے ملحمہ یعنی گوشت و خون پیدا کرنے والے اجزا چربی، نمک اور پانی پر مشتمل ہیں۔ چربی میں وٹامن ’’اے‘‘ پایا جاتا ہے جس سے ہڈیوں کو غذا پہنچتی ہے۔ اجزائے ملحمہ کی مقدار زیادہ ہونے کے باعث یہ غذائیت بخش ہے۔ تاہم گوشت زیادہ کھانے سے گردوں میں یورک ایسڈ کی جو زیادتی ہو جاتی ہے، گردے اسے بآسانی خارج نہیں کر سکتے۔ گوشت بدن میں صفرا زیادہ کرتا ہے۔ ازحد گوشت خوری سے مثانے اور گردے کے امراض رونما ہوتے ہیں۔ جگر، گردوں، قلب اور دوسرے اعضا بدن کے فعل میں نقص آ جاتا ہے۔ اس لیے گوشت کا استعمال کم کرنا چاہیے۔
گوشت عموماً خوب بھون کر پکایا جاتا ہے۔ اس طریقے سے گوشت کے مقوی اجزا جل جاتے ہیں۔ حیاتین بھی ضائع ہوتے ہیں۔ روغنی اجزا بھی نہیں رہتے۔ چناںچہ اسے کھانے کا طریقہ یہ ہے کہ ابلا ہوا گوشت کھایا جائے۔ یا بہترین گُر یہ ہے کہ پہلے گوشت کو مصالحہ وغیرہ ڈال کر بھون لیں پھر پانی ڈال کر پکائیے۔ یوں گوشت کی ساری طاقت شوربے میں آ جاتی ہے۔ اسی لیے شوربا زیادہ مفید ہے۔
اس طریقے میں گوشت کی بوٹی فائدہ مند نہیں رہتی بلکہ قدرے قابض ہو جاتی ہے۔ اسی لیے گوشت کے ساتھ سبزی ڈال کر پکانا مفید ہے۔ یوں اس کی مضرت کم ہو جاتی ہے۔ سبزی کی وجہ سے گوشت فائدہ مند اور صحت بخش غذا بن جاتا ہے۔ دماغی کام کرنے والے افراد گوشت کبھی کبھی کھائیں۔
…٭…
یہ یاد رکھیے کہ جس گوشت کاخون باہر نہ نکالا گیا ہو، گندہ اور بدمزہ ہوتا ہے۔ اس کی رنگت گہری ہوتی ہے۔ متلی لانے کے قابل ہوتا ہے اور زیادہ دیر تک محفوظ نہیں رکھا جا سکتا، بہت جلد خراب ہو جاتا ہے۔مسلم گھروں میں اول تو جھٹکا یا مردار گوشت نہیں آتا۔ پھر گوشت کو خواتین اتنا دھوتی ہیں کہ خون کا آخری قطرہ تک نکل جاتا ہے۔ غیر مسلم دعوتوں اور مسلمان گھرانوں کے گوشت سے پکی چیزوں کو بہت پسند سے کھاتے ہیں۔ ذبح کیے ہوئے جانوروں کا اپنا ہی مزہ ہوتا ہے۔
تازہ گوشت کی نشانی۔
جہاں تک بھینس کے گوشت کا تعلق ہے،
ذبح کے فوراً بعد اس کا رنگ گہرا سرخ ہوتا ہے، اور بھینس کی چربی چمکدار سفید “چاندی” ہوتی ہے، جب کہ لیموں کا پیلا رنگ تسلی بخش حالت کی نشاندہی کرتا ہے۔گوشت خریدتے وقت احتیاطی تدابیراور قصاب نے اشارہ کیا کہ جب گوشت کا رنگ پھیکا سرخ ہو تو اس سے معلوم ہوتا ہے کہ جانور ذبح کرنے سے پہلے بیمار تھا اور اگر گوشت کا رنگ نیلا ہو جائے تو اس سے معلوم ہوتا ہے کہ جانور مر گیا اور پھر ذبح کیا گیا۔ ، اور جب گوشت کے ٹشوز ڈھیلے ہوں، ناقابل قبول بو کے ساتھ یہ اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ گوشت خراب ہو گیا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھینس کے گوشت کے فوائد
لائف بیری نے بھینس کے گوشت کے سب سے نمایاں فائدے بتائے –
مدافعتی نظام کو مضبوط کرتا ہے۔
بھینس کا گوشت کھانے کا ایک فائدہ ہمارے مدافعتی نظام کو مضبوط کرنا ہے کیونکہ اس میں زنک کی مقدار زیادہ ہوتی ہے اس لیے اگر ہم اسے باقاعدگی سے کھائیں تو ہمارا مدافعتی نظام اچھا رہے گا۔
– قلبی امراض کو روکتا ہے۔
بھینس کا گوشت دل کی بعض بیماریوں اور فالج سے بچا سکتا ہے کیونکہ اس میں اومیگا تھری جیسے فیٹی ایسڈز کی مقدار زیادہ ہوتی ہے، اس کے علاوہ اومیگا تھری بلڈ پریشر کو کنٹرول کرتا ہے اور خون میں ٹرائی گلیسرائیڈز کو کم کرتا ہے۔ پٹھوں کی بڑے پیمانے پر تعمیربھینس کے گوشت میں پروٹین کی مقدار بھی زیادہ ہوتی ہے جو کہ گائے کے گوشت سے بھی زیادہ ہوتی ہے۔ وہ کھلاڑی جو پٹھوں کو بنانا چاہتے ہیں اور ان کا جسم کامل ہے وہ بھینس کا گوشت کھا سکتے ہیں، کیونکہ یہ ان کے لیے بہت اچھا ہے۔ –
طاقت کا منبع بھینس کے گوشت میں پروٹین ہوتا ہے اور کاربوہائیڈریٹس بھی توانائی کے منبع کے طور پر فائدہ مند ہوتے ہیں، اس لیے ہمارا جسم ہر روز اپنی سرگرمیاں انجام دینے کے لیے معمول سے زیادہ مضبوط ہو سکتا ہے۔
حاملہ خواتین کے لیے صحت بخش خورا ک
بھینس کا گوشت کھانے کا ایک اور صحت کا فائدہ حمل (ماں اور جنین) کے لیے مناسب غذائیت ہے، کیونکہ اس میں وٹامن بی 12 ہوتا ہے جو جنین کی دماغی نشوونما اور حاملہ عورت کی صحت کے لیے واقعی فائدہ مند ہے۔
چھاتی کے کینسر کا علا ج
بریسٹ کینسر کو ایک سنگین بیماری سمجھا جاتا ہے۔یہ عام طور پر خواتین پر حملہ آور ہوتا ہے لیکن کچھ مرد بھی اس کا شکار ہو سکتے ہیں۔بھینس کے گوشت میں موجود لینولک ایسڈ چھاتی کے کینسر جیسے کینسر کے خلیات سے لڑنے میں موثر مادہ ہے۔اومیگا تھری بھینس کے گوشت میں بھی مدد کرتا ہے۔ –
بچوں کے لیے مفید ہے۔
نہ صرف بالغوں کے لیے پٹھوں کی مقدار بڑھانے کے لیے، بھینس کے گوشت میں پروٹین کی مقدار زیادہ ہوتی ہے جو کہ بچوں کی ہڈیوں کی نشوونما کے لیے واقعی اچھا ہے، اس لیے اسے ہر روز کھایا جا سکتا ہے۔
پروسٹیٹ کینسر کی روک تھام
پروسٹیٹ کینسر ایک کینسر ہے جو انسانی تولیدی نظام میں پھیلتا ہے۔ پروسٹیٹ کینسر اس وقت ہو سکتا ہے جب پروسٹیٹ بے قابو ہو جاتا ہے اور بڑھتا ہے، اور بالآخر پروسٹیٹ سے جسم کے دوسرے حصوں جیسے ہڈیوں اور لمف نوڈ میں پھیل جاتا ہے۔ پروسٹیٹ کینسر کے علاج اور روک تھام کا بہترین حل بھینس کا گوشت باقاعدگی سے کھانا ہے۔ –
کولیسٹرول کو کم کرنا
بھینس کے گوشت میں اومیگا 3 مواد ہائی ڈینسٹی لیپوپروٹین (ایچ ڈی ایل) بڑھانے اور کم کثافت لیپو پروٹین (ایل ڈی ایل) کو کم کرنے کے لیے بہت اچھا ہے۔ لہذا، موٹے لوگ اسے کھا سکتے ہیں اور آپ کو موٹاپے سے صحت کے کچھ خطرات لاحق ہوں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عربی لوگوں کے مشاہدات و تجربات
قربانی خریدنے سے پہلے..
گوشت میں اعلیٰ غذائیت ہوتی ہے، کیونکہ یہ انسانی جسم کو ضروری پروٹین فراہم کرنے کا اہم ذریعہ ہے، اس کے ساتھ ساتھ بہت سے صحت کے فوائد بھی ہیں، اس لیے بہت سے لوگ بیل، گائے کے گوشت اور بھینس کے گوشت میں فرق تلاش کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔
نصر سٹی کے علاقے کے قصابوں میں سے ایک ابراہیم السید نے بتایا کہ بچھڑے، گائے کے گوشت اور بھینس کے گوشت میں فرق یہ ہے کہ بچھڑا دو یا تین ماہ کی عمر میں ذبح کرنے کو ترجیح دیتا ہے، انہوں نے وضاحت کی کہ اس کی عمر جتنی زیادہ ہوتی ہے، اس کے ٹشوز جتنے موٹے ہوتے ہیں، جب کہ اگر اسے دوسرے مہینے سے پہلے ذبح کر دیا جائے تو وہ گوشت ہے، یہ کم ہم آہنگ ہوتا ہے اور اس کا ذائقہ ہلکا ہوتا ہے۔ بیل کو دوسرے سرخ گوشت سے ممتاز کرنے والی سب سے اہم خصوصیت یہ ہے کہ اس کا رنگ چمکدار سرخ ہوتا ہے۔ اور اس کی بو تازہ ہے، اور اس میں موجود چکنائی اس کے چمکدار سفید رنگ سے پہچانی جاتی ہے، اور اس کی نرمی اس بات کی طرف اشارہ کرتی ہے کہ گوشت تازہ نہیں ہے۔
گائے کا گوشت
تمام گوشت میں سب سے زیادہ صحت بخش ہے۔الوطن کو دیے گئے خصوصی بیانات میں السید نے مزید کہا کہ گائے کا گوشت دیگر سرخ گوشت سے زیادہ صحت بخش ہے، کیونکہ اس کا غذائیت کا فائدہ زیادہ ہے، اور یہ دوسروں کے مقابلے میں آسان ہضم ہے، اور یہ مریضوں کے لیے خوراک کے طور پر موزوں ہے اور ساخت میں کمزور ہے۔ اور اس کی سب سے اہم خصوصیات میں سے ایک یہ ہے کہ اس کا رنگ گہرا سرخ، اس کی بو تازہ ہے، اور اس میں موجود چربی گوشت کے ساتھ جڑی ہوئی ہے، اور چکنائی کا رنگ زرد مائل ہے اور یہ مربوط دھاگوں پر مشتمل ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھینس کا گوشت – مفید خصوصیات.
بھینس کا گوشت ایک غذائیت سے بھرپور اور صحت بخش پراڈکٹ ہے جو کسی بھی دوسری قسم کے گوشت کی جگہ لے سکتا ہے۔غذائی اجزاء کی ساخت کے لحاظ سے اس کا موازنہ گائے کے گوشت اور ویل سے کیا جاتا ہے۔ غذائیت کے لحاظ سے، یہ دبلی پتلی ویل سے بہتر ہے۔
اجزائی ترکیبی
بھینس کے گوشت میں سب سے زیادہ مفید اجزاء درج ذیل ہیں۔فاسفورک ایسڈوٹامن بیٹریس عناصر پوٹاشیم، میگنیشیم، سوڈیم، کیلشیم، سلفربھینس کا گوشت خون کی کمی کے لیے مفید ہے، اور خون میں ہیموگلوبن کی سطح کو بڑھاتا ہے۔ مصنوعات کی یہ خاصیت اس کی ساخت میں آئرن کی اعلی مقدار کی وجہ سے ہے۔ اس اشارے کے مطابق، بھینس کا گوشت گائے کے گوشت سے کمتر نہیں ہے، جسے کم ہیموگلوبن کے ساتھ کھانے کی بھی سفارش کی جاتی ہے۔ بھینس کے گوشت کا باقاعدگی سے استعمال آپ کو پٹھوں کے بڑے پیمانے پر بنانے کی اجازت دیتا ہے، جو ان لوگوں کے لیے بہت مفید ہے جو کچھ کھیلوں کی پیروی کرتے ہیں۔ بھینس کے گوشت کو خوراک میں شامل کرنے سے انسانی مدافعتی نظام کو مضبوط بنانے میں مدد ملتی ہے جس سے شدید وبائی امراض کے دوران بھی متعدی امراض کا خطرہ کم ہوجاتا ہے۔
بہتر نیند۔
بھینس کے گوشت کا معیار نیند کو بہتر بنانے اور بے خوابی سے نجات دلانے کے لیے بھی جانا جاتا ہے۔ ایک ہی وقت میں، مصنوعات توجہ اور توجہ میں اضافہ کرتی ہے. توانائی میں اضافہ، جسم کو اچھی حالت میں برقرار رکھنا – یہ سب بھینس کے گوشت کے باقاعدہ استعمال کا نتیجہ ہے۔ مزید یہ کہ انسانی جسم پر پراڈکٹ کا مثبت اثر دیرپا ہوتا ہے، یعنی بھینس کے گوشت کا تھوڑا سا حصہ کھانے کے بعد بھی انسان میں توانائی اور طاقت دن بھر موجود رہتی ہے۔
ذائقہ کی خصوصیا ت
بھینس کا گوشت گہرا سرخ رنگ کا ہوتا ہے۔ گوشت کا ذائقہ کسی بھی چیز سے زیادہ گائے کے گوشت جیسا ہوتا ہے، لیکن اس کا ذائقہ غیر معمولی ہے۔ بھینس کا گوشت زیادہ قیمتی سمجھا جاتا ہے۔ یہ کم گھنے اور کم سخت ہے۔کھانا پکانے کی ایپس کھانا پکانے میں، بھینس کا گوشت میز کے گوشت کے طور پر استعمال ہوتا ہے۔ لیکن اگر بھینسوں کی افزائش کے ممالک میں اس کے گوشت کے پکوان روزانہ ہوتے ہیں تو دوسرے خطوں میں یہ ایک لذیذ چیز ہے۔ اکثر،بیل کھانا پکانے میں استعمال کیا جاتا ہے. کھانے کی صنعت میں، بھینس کے گوشت کو قیمہ بنایا گیا یا بنا ہوا گوشت بنایا جاتا ہے، جس سے نیم تیار شدہ مصنوعات، ہارڈ اسموکڈ ساسیج، پکانے والی مصنوعات حاصل کی جاتی ہیں۔
گھریلو کھانا پکانے میں،
بھینس کے گوشت کو مختلف طریقوں سے پروسیس کیا جا سکتا ہے: فرائی، خشک، ابلا ہوا، سٹو، اور یہاں تک کہ کچا کھائیں۔ یہ گوشت تیار کرنا اتنا ہی آسان ہے جتنا سور کا گوشت۔ تاہم، اگر آپ اسے اس سے زیادہ استعمال کرتے ہیں، تو یہ سخت اور خشک ہو جائے گا، اور اپنی زیادہ تر مفید خصوصیات کو بھی کھو دے گا۔ سب سے لذیذ پکوان تلی ہوئی بھینس کا گوشت ہے۔ اس سے آپ شیش کباب بنا سکتے ہیں یا فرائی پین میں فرائی کر سکتے ہیں۔ اگر ٹکڑے چکنائی والے ہیں، تو آپ ان کے بغیر تیل ڈالے بغیر کر سکتے ہیں۔ بھینس کے گوشت کو بڑے اور چھوٹے ٹکڑوں میں تلا جاتا ہے، اور رسی کو برقرار رکھنے کے لیے اناج کے پار کاٹ دیا جاتا ہے۔ آپ پیٹ، پنیر، یا کسی اور پروڈکٹ کو بھرنے کے طور پر استعمال کر سکتے ہیں۔ سبزیوں یا لہسن کے ساتھ تلا ہوا بھینس کا گوشت بہت لذیذ ہوتا ہے لیکن لہسن کو بعد میں چھوڑ دینا چاہیے۔ یہ ھٹی کریم کے ساتھ اچھی طرح جاتا ہے، جسے فرائی کے اختتام پر شامل کیا جا سکتا ہے۔
کیلوریز، کیلوری:
گرام میں پروٹین:کاربوہائیڈریٹ، جی:گوشت کی مصنوعات میں، جنگلی جانوروں کا گوشت ہمیشہ ممتاز رہا ہے، جو اپنی خاص فائدہ مند خصوصیات کے لیے مشہور ہے۔ سب سے زیادہ مقبول اور غذائیت بھینس کا گوشت ہے۔ اس پروڈکٹ کا استعمال ہندوستان اور قفقاز کے علاقے میں بڑے پیمانے پر تیار کیا گیا ہے۔ دوسرے ممالک میں بھینس کا گوشت نفاست کی سطح پر مقبول ہے۔بالغ بھینس کے گوشت کی ساخت گھنی اور سخت ہوتی ہے جو کہ پکوان کے ذائقے کو منفی طور پر متاثر کرتی ہے، اس لیے وہ کھانا پکانے میں جوان جانوروں کے گوشت کو استعمال کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔بھینس کے اصلی گوشت کے انتخاب میں غلطی نہ ہونے کے لیے، گوشت کی چربی والی تہہ پر توجہ دیں، یہ ہلکا، کبھی کبھی گلابی رنگ کا ہونا چاہیے۔ اسی بھینس کا گوشت گہرا سرخ ہوتا ہے اور اس کی مخصوص بو ہوتی ہے۔بھینس کی کیلوریزبھینس کے گوشت میں کیلوری کا مواد 194 کلو کیلوری فی 100 گرام پروڈکٹ ہے۔
بھینس کے گوشت کی ترکیب
بھینس کے گوشت کے مفید خوا ص بھینس کا گوشت کھاتے وقت توانائی میں اضافہ، توجہ اور ارتکاز میں اضافہ دیکھا جاتا ہے۔ مثبت اثر طویل مدتی ہے۔ اس طرح دن بھر توانائی برقرار رہتی ہے۔ بھوک کا احساس بھی ختم ہوجاتا ہے۔کھانا پکانے میں بھینس کا گوشت بھینس کے گوشت کو میز کے گوشت کے ساتھ ساتھ صنعتی پروسیسنگ کے لیے بھی استعمال کیا جاتا ہے ۔۔بھینس کا گوشت کچا، خشک اور تھوڑا کھایا جا سکتا ہے۔ پیمیکان کی تیاری بہت سوادج ہے، اگرچہ تکلیف دہ (حرارتی)۔ بھوننے یا ابالنے کے بعد بھینس کا گوشت اپنا ذائقہ اور فائدہ مند خصوصیات کھو سکتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
·گوشت کے فوائد و نقصانات
گوشت سفید ہویا سرخ ،حیوانی پروٹین (Protein) کے حصول کا بہترین ذریعہ ہے اور انسانی جسم کی نشوونما کیلئے پروٹین کو کلیدی اہمیت حاصل ہے۔یہ انسانی جسم مین خلیوں کی توڑ پھوڑ یعنی میٹا بولزم (Metabolism) کے نتیجے میں پیدا ہونے والی کمزوری دور کرکے اینٹی باڈیز Antibodiesپیدا کرتی ہے جس کی بدولت جسم مختلف اقسام کے انفیکشن سے محفوظ رہتا ہے۔گوشت کی بدولت ہی خون میں سرخ خلئے یعنی ریڈبلڈسیلز (Red Blood Cells) بنتے ہیں جبکہ آئرن (Iron) زنک (Zinc) سیلینیئم (Selenium) اور مختلف اقسام کے وٹامنز بھی اسی سے حاصل کئے جاتے ہیں۔آئرن سے جسم میں ہیموگلوبن (Hemoglobin) پیدا ہوتا ہے اور خون کی ترسیل بہتر ہوتی ہے زنک سے نئے ٹشوز بنتے ہیں اور سیلینیئم جسم سے غیر ضروری چکنائیوں اور دیگر کیمیکلز ختم کرنے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔
گوشت میں موجود وٹامن اے بی اور ڈی ہڈیوں ،دانتوں آنکھوں اور دماغ کے ساتھ ساتھ جلد کو بھی جوان رکھتے ہیں۔حیاتیاتی اعتبار سے اس میں مکمل پروٹین جن میں آٹھوں بنیادی مائنوایسڈز(Amino Acids) موجود ہوں ، پائے جاتے ہیں۔یہ ضروری امائنوایسڈز قدرتی طور پر انسانی جسم میں پیدانہیں ہوتے لہٰذا ان کا بیرونی غذا سے حصول ضروری ہوجاتاہے۔یہ نہ صرف مسلز کوطاقتور بناتے ہیں بلکہ جسم کو قوت مدافعت میں بھی اضافہ کرتے ہیں ۔یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ قربانی کا گوشت تازہ اور صحت مند غذائیت سے بھرپور ہونے کے باعث زیادہ کیلوریز (Calories) پر مشتمل ہوتا ہے جس کو زیادہ مقدار میں کھانے سے مضرصحت اثرات کے خدشات بڑھ جاتے ہیں۔
جانورکے مختلف اجزا کے استعمال کے فوائد
دل کے مریض گوشت کی بجائے دالیں اور سبزیاں زیادہ استعمال کریں ،شوگر اور دل کے مریض کلیجی ، گردے اور مغز کا استعمال ہرگزنہ کریں کیونکہ ان میں کولیسٹرول کی مقدار عام گوشت کے مقابلے میں کئی گنا زیادہ ھوتی ھے۔
کچھ افراد کو جانوروں کے گردوں، دل، دماغ، اوجھڑی، کلیجی، زبان اور لبلبے کا گوشت کھانے کا شوق ہوتا ہے، مگر کچھ افراد ایسے گوشت کو صحت کے لیے نقصان دہ سمجھ کر کھانے سے کتراتے ہیں۔
مگر ماہرین صحت کہتے ہیں جانوروں کے اعضاء کا گوشت ان کی ٹانگوں، پٹھوں، کمر اور پیٹ کے دیگر گوشت کے مقابلے میں زیادہ صحت مند اور فائدہ مند ثابت ہوتا ہے۔
جانوروں کے گردوں، دل، دماغ، اوجھڑی، کلیجی، زبان اور لبلبے میں وٹامنز اور آئرن سمیت میگنشیئم، سیلینیئم، زنک اور دیگر غذائی اجزاء موجود ہوتے ہیں، جو انسانی صحت اور مضبوط جسم کے لیے فائدہ مند ہوتے ہیں۔
ہیلتھ جنرل میں شائع ہونے والے ایک مضمون کے مطابق گائے، بھیڑ، بکری، بھینس اور دیگر دودھ دینے والے جانوروں سمیت مرغی اور بطخ جیسے پرندوں سے حاصل کردہ کلیجی، گردوں، دل، دماغ اور اوجھڑی میں انسانی جسم کو مضبوط بنانے والے اجزاء پائے جاتے ہیں۔
ہیلھ جنرل کے مطابق صرف 100 گرام کلیجی کو پکانے کے بعد اس سے 27 گرام پروٹین، 175 کیلوریز، 1386 فیصد وٹامن بی 12، 522 فیصد وٹامن اے، 51 فیصد وٹامن بی 6، 47 فیصد سیلینیئم، 35 فیصد زنک اور 34 فیصد آئرن حاصل ہوتا ہے، جو یومیہ حساب سے انسانی صحت کے لیے بہترین غذا ہے۔
کلیجی، اوجھڑی، گردوں، دل اور دماغ کا گوشت حاملہ خواتین کے لیے بھی نہایت فائدہ مند ہے، جو نہ صرف ماں بلکہ بچے کی غذا کے لیے بھی بہترین ہے۔
کلیجی، اوجھڑی اور گردوں میں کولیسٹرول
ہیلتھ جنرل میں شائع ہونے والے مضمون کے مطابق ان تمام اعضاء کے گوشت میں کولیسٹرول کی مقدار بہت زیادہ ہوتی ہے، تاہم یہ نقصان دہ نہیں ہوتی۔
ماہرین کے مطابق انسان کا جگر، کلیجی اور گردے کولیسٹرول پیدا کرتے ہیں، تاہم یہ اعضاء اُس وقت کولیسٹرول پیدا کرنا بند کردیتے ہیں، جب انسان کولیسٹرول کی مقدار والے کھانے یا پھل کھاتا ہے۔
مضمون میں دعویٰ کیا گیا کہ کلیجی، گردے، اوجھڑی، دل، دماغ، لبلبے اور زبان کا گوشت کھانے سے خون میں کولیسٹرول کی سطح نہیں بڑھتی اور ان کو کھانے کے بعد انسان کا جگر، گردے اور دیگر اعضاء کولیسٹرول پیدا کرنا بند کردیتے ہیں۔
بھینس کے کچھ نقصانات
: سوداوی یعنی خشک مزاج والوں کے لئے مناسب نہیں۔ دیرہضم‘ غلیظ اور مؤلد اخلاط کثیف و سوداوی ہے۔ روزانہ کھانے والے عموماً بواسیر‘ سوزاک اور معدہ کے کئی امراض میں مبتلا ہوجایا کرتے ہیں۔ ادرک مناسب مقدار میں ڈال کر سبزیوں کے ساتھ ترکاری پکا کر کھایا جائے تو نقصان نہیں ہوتا۔اگر سبزیوں میں ملاکر پکایا جائے تو مناسب اصلاح ہوجاتی ہے۔

 

Hakeem Qari Younas

Assalam-O-Alaikum, I am Hakeem Qari Muhammad Younas Shahid Meyo I am the founder of the Tibb4all website. I have created a website to promote education in Pakistan. And to help the people in their Life.
View All Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *